Tera Hijar Hi Pyara Hai

نظم
تیرا ہجر ہی پیارا ہے
وصل کے موسم کا کیا کہنا

لمحہ بھر کے سکھ کے بدلے
پھر وہی حال ہمارا ہے

آنکھ میں ساون کی شامیں
چہرہ درد کا مارا ہے

پلکوں کی ڈھلوان پہ لرزاں
اشک کا دھندلا تارا ہے

مت کر ہم سے وصل کے وعدے
کب اس کیف کا یارا ہے

اور بڑھا دے ہجر کی تلخی
یہی تو ایک سہارا ہے

تجھے سے دور ہی اچھے ہیں ہم
جو بھی حال ہمارا ہے

کیا لینا ہے تجھ سے مل کر
تیرا ہجر ہی پیارا ہے
Nazam
Tera Hijar Hi Pyara Hai
Wisal ky mossom ka kya kehna

Lamha bhar ky sukh ky badly
Phir wohi haal hamara hai

Ankh main sawan ki shammay
Chahra dard ka maara hai

Pallko ki dhallwan py larzaan
Ashk ka dhundla taara hai

Mt kr hum y wisal ky waday
Kab is qaif ka yaara hai

Aur bhara dy hijar ki talkhi
Yahi tu aik sahara hai

Tujh sy door hi achay hain hum
Jo bhi haal hamara hai

Kia lana hai tujh sy mill kr
Tera hijar hi pyara hai

اپنا تبصرہ بھیجیں