Be-Khayali Mein Younhi Bas Aik Irada Kar Liya

Be-Khayali Mein Younhi Bas Aik Irada Kar Liya

Be-Khayali Mein Younhi Bas Aik Irada Kar Liya
Apne dil ke shoq ko had se zyada kar liya

Jante thay dono ham es ko nibha saktay nahi
Us nay wada kar liya mein nay bhi wada kar liya

Gair se nafrat jo pa li kharch khud per hogai
Jitne ham thay ham nay khud ko adha kar liye

Shaam ke rangon mein rakh kar saaf pani ka glass
Aab-e-sada ko harif-e-rang bada kar liya

Hijrton ka khoof tha ya pur kashish kehna maqam
Kia tha jis ko ham ne khud dewar jada kar liya

Aik aisa shakhs banta ja raha hoon mein munir
Jis nay khud per band hassan-o-jaam-o bada kar liya

Be-khayali mein younhi bas aik irada kar liya
Apne dil ke shoq ko had se zyada kar liya
غزل
بے خیالی میں یونہی بس ایک ارادہ کر لیا
اپنے دل کے شوق کو حد سے زیادہ کر لیا

جانتے تھے دونوں ہم اس کو نبھا سکتے نہیں
اُس نے وعدہ کر لیا میں نے بھی وعدہ کرلیا

غیر سے نفرت جو پا لی خرچ خود پر ہو گئی
جتنے ہم تھے ہم نے خود کو اس سے آدھا کر لیا

شام کے رنگوں میں رکھ کر صاف پانی کا گلاس
آبِ سادہ کو حریفِ رنگ بادہ کر لیا

ہجرتوں کا خوف تھا یا پر کشش کہنہ مقام
کیا تھا جس کو ہم نے خود دیوار جادہ کر لیا

ایک ایسا شخص بنتا جا رہا ہوں میں منیر
جس نے خود پر بند حسن وجام و بادہ کرلیا

بے خیالی میں یونہی بس ایک ارادہ کر لیا
اپنے دل کے شوق کو حد سے زیادہ کر لیا

اپنا تبصرہ بھیجیں