Yaadon Ke Bagh Se Wo Hara Pan Nahi Gaya

شاعر:انور شعور
غزل
یادوں کے باغ سے وہ ہرا پن نہیں گیا
ساون کے دن چلے گئے ساون نہیں گیا

ٹھہرا تھا اتفاق سے وہ دل میں ایک بار
پھر چھوڑ کر کبھی یہ نشیمن نہیں گیا

ہر گل میں دیکھتا رخ لیلیٰ وہ آنکھ سے
افسوس قیس دشت سے گلشن نہیں گیا

رکھا نہیں مصور فطرت نے مو قلم
شہ پارہ بن رہا ہے ابھی بن نہیں گیا

میں نے خوشی سے کی ہے یہ تنہائی اختیار
مجھ پر لگا کے وہ کوئی قدغن نہیں گیا

تھا وعدہ شام کا مگر آئے وہ رات کو
میں بھی کواڑ کھولنے فوراً نہیں گیا

دشمن کو میں نے پیار سے راضی کیا شعورؔ
اس کے مقابلے کے لئے تن نہیں گیا
Ghazal
Yaadon Ke Bagh Se Wo Hara Pan Nahi Gaya
sawan ke din chale gae sawan nahin gaya

Thahra tha ittifaq se wo dil mein ek bar
phir chhod kar kabhi ye nasheman nahin gaya

har gul mein dekhta rukh-e-laila wo aankh se
afsos qais dasht se gulshan nahin gaya

rakkha nahin musawwir-e-fitrat ne mu-qalam
shah-para ban raha hai abhi ban nahin gaya

main ne khushi se ki hai ye tanhai ikhtiyar
mujh par laga ke wo koi qadghan nahin gaya

tha wada sham ka magar aae wo raat ko
main bhi kiwad kholne fauran nahin gaya

dushman ko main ne pyar se raazi kiya ‘shuur’
us ke muqable ke liye tan nahin gaya

اپنا تبصرہ بھیجیں