Mian Yeh Duniya Hai Chehre Haseen Choomti Hai

Mian Yeh Duniya Hai Chehre Haseen Choomti Hai

Mian Yeh Duniya Hai Chehre Haseen Choomti Hai
Yeh maan nahi hai jo sab ke jaben choomti hai

Usay kamal ki nisbat hai apni mitti se
Woh gaon wali hai din bhar zamen choomti hai

Woh doston ko batata itni pagal hai
Kalai meri kabhi aasteen choomti hai

Tumharay naam ko yun choomtay hain lab jaise
Kisi saperay ke hontoon ko been choomti hai

Mein aanay wali hoon suraj ke samne ab dekh
Yeh dhoop kaisay rukh dil nasheen choomti hai

Mian yeh duniya hai chehre haseen choomti hai
Yeh maan nahi hai jo sab ke jaben choomti hai
غزل
میاں یہ دنیا ہے چہرے حسین چومتی ہے
یہ ماں نہیں ہے جو سب کی جبین چومتی ہے

اُسے کمال کی نسبت ہے اپنی مٹی سے
وہ گاؤں والی ہے دن بھر زمین چومتی ہے

وہ دوستوں کو بتاتا اِتنی پاگل ہے
کلائی میری کبھی آستین چومتی ہے

تمہارے نام کو یوں چومتے ہیں لب جیسے
کسی سپیرے کے ہونٹوں کو بِین چومتی ہے

میں آنے والی ہوں سورج کے سامنے اب دیکھ
یہ دھوپ کیسے رخ دلنشین چومتی ہے

میاں یہ دنیا ہے چہرے حسین چومتی ہے
یہ ماں نہیں ہے جو سب کی جبین چومتی ہے
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں