Sabhi Naqoosh Ghalat Khaal-O-Khad Bala

Sabhi Naqoosh Ghalat Khaal-O-Khad Bala

Sabhi Naqoosh Ghalat Khaal-O-Khad Bala Ke Kharaab
Mujhe woh theek nahi kar saka bana ke kharaab

Mujhe pasand hai har shay jo mere jaisi ho
So achi cheez mein rakh aati hoon utha ke kharaab

Bas aik bar hi kafi hai zindagi keh khuda
Phir iss jahan mein hona hai kis ko aagay kharaab

To ek chiragh jala aao shab ki chokhat par
Agar mizaaj nahi lag rahe, hawa ke kharaab

Har aik kaam mukamal tawaja chahta hai
Tabhi to khud ko kiya, khoob dil laga ke kharaab

Tazaad-e-qoul-o-amal aur fareeb lehjon mein
Yeh log dekhne mein hi thay intiha ke kharaab

Mein sab se khushnuma pathar thi tujh imarat ka
So tou ne khud ko kiya hai, mujhe hata ke kharaab

Tumhara dukh hai keh tum bhi bana diye gaye ho
Hamara kia hai keh hum log thay sada ke kharaab

Sabhi nuqoosh ghalat khaal-o-khad bala ke kharaab
Mujhe woh theek nahi kar saka bana ke kharaab
غزل
سبھی نقوش غلط، خال و خد، بلا کے خراب
مجھے وہ ٹھیک نہیں کرسکا، بنا کے خراب

مجھے پسند ہے ہرشے جو میرے جیسی ہو
سو اچھی چیز میں رکھ آتی ہوں ، اُٹھا کے خراب

بس ایک بار ہی کافی ہے زندگی کہ خدا
پھر اِس جہان میں ہونا ہے کس کو آگے خراب

تو اک چراغ جلا آؤ شب کی چوکھٹ پر
اگر مزاج نہیں لگ رہے ، ہوا کے خراب

ہر ایک کام مکمل توجہ چاہتا ہے
تبھی تو خود کو کیا، خوب دل لگا کے خراب

تضادِ قول و عمل اور فریب لہجوں میں
یہ لوگ دیکھنے میں ہی تھے اِنتہا کے خراب

میں سب سے خوشنما پتھر تھی تجھ عمارت کا
سو تُو نے خود کو کیا ہے ، مجھے ہٹا کے خراب

تمہارا دکھ ہے کہ تم بھی بنا دئیے گئے ہو
ہمارا کیا ہے کہ ہم لوگ تھے سدا کے خراب

سبھی نقوش غلط، خال و خد، بلا کے خراب
مجھے وہ ٹھیک نہیں کرسکا، بنا کے خراب
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں