Unhein Mein Jeete Unhi Bastiyon Mein Mar Rehte

Unhein Mein Jeete Unhi Bastiyon Mein Mar Rehte

Unhein Mein Jeete Unhi Bastiyon Mein Mar Rehte
Yeh chahte thay magar kis ke naam par rehte

Paiyamberon se zamenin wafa nahi kartin
Ham aisay kon khuda thay keh apne ghar rehte

Parinde jate na jate palat ke ghar apne
Par apne ham shajron se tou bakhabar rehte

Bas aik khaak ka ehsan hai keh khair se hain
Wagarna surat khashak dar ba-dar rehte

Mere kareem jo teri raza magar es bar
Bars guzar gaye shakhon ko be samar rehte

Unhein mein jeete unhi bastiyon mein mar rehte
Yeh chahte thay magar kis ke naam par rehte
غزل
انہیں میں جیتے انہی بستیوں میں مر رہتے
یہ چاہتے تھے مگر کس کے نام پر رہتے

پیمبروں سے زمینیں وفا نہیں کرتیں
ہم ایسے کون خدا تھے کہ اپنے گھر رہتے

پرندے جاتے نہ جاتے پلٹ کے گھر اپنے
پر اپنے ہم شجروں سے تو با خبر رہتے

بس ایک خاک کا احسان ہے کہ خیر سے ہیں
وگرنہ صورت خاشاک در بہ در رہتے

میرے کریم جو تیری رضا مگر اس بار
برس گزر گئے شاخوں کو بے ثمر رہتے

انہیں میں جیتے انہیں بستیوں میں مر رہتے
یہ چاہتے تھے مگر کس کے نام پر رہتے

اپنا تبصرہ بھیجیں