Nazar Andaaz Hai Gayal Pare Hain| Ali Zaryoun

Nazar Andaaz Hai Gayal Pare Hain| Ali Zaryoun

Nazar Andaaz Hai Gayal Pare Hain
Kayi darya kayi jangal pare hain

Nazar uthi hai uss ki mere janib
Kayi paishanyion par bal pare hain
 
Kahani chhor mat dena keh iss mein
Abhi mujh se bhi kayi pagal pare hain
 
Mein uss ka khat baha keh aaraha hoon
Mere bazoo abhi tak shal pare hain
 
Usay kehna keh kal terrace peh aaye
Usay kehna keh badal chal pare hain
 
Nazar andaaz hai gayal pare hain
Kayi darya kayi jangal pare hain
غزل
نظر انداز ہے گائل پڑے ہیں
کئی دریا کئی جنگل پڑے ہیں
 
نظر اُٹھی ہے اُس کی میرے جانب
کئی پیشانیوں پر بل پڑے ہیں
 
کہانی چھوڑ مت دینا کہ اِس میں
ابھی مجھ سے بھی کئی پاگل پڑے ہیں
 
میں اُس کا خط بہا کہ آرہا ہوں
میرے بازو ابھی تک شل پڑے ہیں
 
اُسے کہنا کہ کل ٹیرس پہ آئے
اُسے کہنا کہ بادل چل پڑے ہیں
 
نظر انداز ہے گائل پڑے ہیں
کئی دریا کئی جنگل پڑے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں