Uss Peh Nasoor Ka Aakhir Mein Gumaan Hota Hai

Uss Peh Nasoor Ka Aakhir Mein Gumaan Hota Hai

Uss Peh Nasoor Ka Aakhir Mein Gumaan Hota Hai
Warna aaghaz mein gham rahat-e-jaan hota hai

Aakhir-e-kar pahunch jate hain anjaam ko khawab
Raakh bach jati hai aankhon mein dhuwan hota hai

Phir rat-e-zard se ashjaar galay miltay hain
Pehlay pehlay to bara khauf-e-khizan hota hai

Woh taheer hai ke saktay mein badan aa jaye
Khoon mushkil se rag-e-dil mein rawan hota hai

Baat tu aam si hoti hai magar suntay hain log
Woh jo uss shakhs ka andaaz-e-bayaan hota hai

Hum ne ji jan se iss bar adheray hain rafu
Thori wehshat mein guzara hi kahan hota hai

Uss peh nasoor ka aakhir mein gumaan hota hai
Warna aaghaz mein gham rahat-e-jaan hota hai
غزل
اُس پہ ناسور کا آخر میں گماں ہوتا ہے
ورنہ آغاز میں غم راحتِ جاں ہوتا ہے

آخرِ کار پہنچ جاتے ہیں انجام کو خواب
راکھ بچ جاتی ہے آنکھوں میں دھواں ہوتاہے

پھر رتِ رزد سے اشجار گلے ملتے ہیں
پہلے پہلے تو بڑا خوفِ خزاں ہوتا ہے

وہ تحیر ہے کہ سکتے میں بدن آ جائے
خون مشکل سے رگِ دل میں رواں ہوتا ہے

بات تو عام سی ہوتی ہے مگر سنتے ہیں لوگ
وہ جو اُس شخص کا اندازِ بیاں ہوتا ہے

ہم نے جی جان سے اِس بار ادھیڑے ہیں رفو
تھوڑی وحشت میں گزارا ہی کہاں ہوتا ہے

اُس پہ ناسور کا آخر میں گماں ہوتا ہے
ورنہ آغاز میں غم راحتِ جاں ہوتا ہے
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں