Pata Hai Kandhon Se Ik Din Farishtay Urr | Afkar Alvi

Pata Hai Kandhon Se Ik Din Farishtay Urr | Afkar Alvi

Pata Hai Kandhon Se Ik Din Farishtay Urr Jayenge
Magar yeh dukh hai keh mayoos ho ke urr jayenge

Teri mandair peh kab tak sahenge faqa kashi
Hum aik roz yunhi bethe bethe urr jayenge

Sukoon se rehne den kis ne hamesha rehna hai
Sab apne bachon ko urna sikha ke urr jayenge

Shikariyon ki maharat peh shak nahi hai magar
Parinday teer uthane se pehle urr jayenge

Abhi tou habs peh harza sarayi karte hain
Hawa chalegi tou un sab ke totay urr jayenge

Mein aaj akela hoon pistol bhi hai dukh bhi hai
Tumhare bagh mein bethe parinday urr jayenge

Darane walo hamein dekhne ko tarso gay
Kabhi nah lotenge ik roz aisay urr jayenge

Pata hai kandhon se ik din farishtay urr jayenge
Magar yeh dukh hai keh mayoos ho ke urr jayenge
غزل
پتہ ہے کندھوں سے اک دن فرشتے اُڑ جائینگے
مگر یہ دکھ ہے کہ مایوس ہو کے اُڑ جائینگے

تری منڈیر پہ کب تک سہیں گے فاقہ کشی
ہم ایک روز یو نہی بیٹھے بیٹھے اُڑ جائینگے

سکوں سے رہنے دیں کس نے ہمیشہ رہنا ہے
سب اپنے بچوں کو اُڑنا سکھا کے اُڑ جائینگے

شکاریوں کی مہارت پہ شک نہیں ہے مگر
پرندے تیر اٹھانے سے پہلے اُڑ جائینگے

ابھی تو حبس پہ ہرزہ سرائی کرتے ہیں
ہوا چلے گی تو ان سب کے طوطے اُڑ جائینگے

میں آج اکیلا ہوں پستول بھی ہے دکھ بھی ہے
تمہارے باغ میں بیٹھے پرندے اُڑ جائینگے

ڈرانے والو ہمیں دیکھنے کو ترسو گے
کبھی نہ لوٹیں گے اک روز ایسے اُڑ جائینگے

پتہ ہے کندھوں سے اک دن فرشتے اُڑ جائینگے
مگر یہ دکھ ہے کہ مایوس ہو کے اُڑ جائینگے

اپنا تبصرہ بھیجیں