Tere Shoridaah Mizaji Ke Sabab Tere Nahi

Tere Shoridaah Mizaji Ke Sabab Tere Nahi

Tere Shoridaah Mizaji Ke Sabab Tere Nahi
A mere sheher tere log bhi ab tere nahi

Mein ne ek aur bhi mehfil mein unhain dekha hai
Ye jo tere nazar atay hain yeh sab tere nahi

Yeh bah har lehzaah nai dhon pe tharaktay howay log
Kon jane keh yeh kab tere hain kab tere nahi

Tera ehsan keh jane gaye pehchane gaye
Ab kisi aur ke kia hoon gaye yeh jab tere nahi

Dar badar ho ke bhi jo teri taraf dekhte thay
Wo tere khanman barbad bhi ab tere nahi

Ab gila kia keh hawa ho gaye sab halqa bagoosh
Mein na kehta tha keh ye sehal talab tere nahi

Ho na ho dil pe koi bhoj hai bhari warna
Baat kehne ke yeh andaz yeh dhaab tere nahi

Tere shoridaah mizaji ke sabab tere nahi
A mere sheher tere log bhi ab tere nahi
غزل
تیرے شوریدہ مزاجی کے سبب تیرے نہیں
اے مرے شہر ترے لوگ بھی اب تیرے نہیں

میں نے ایک اور بھی محفل میں انھیں دیکھا ہے
یہ جو تیرے نظرآتے ہیں یہ سب تیرے نہیں

یہ بہ ہر لحظہ نئی دھن پہ تھرکتے ہوئے لوگ
کون جانے کہ یہ کب تیرے ہیں کب تیرے نہیں

تیرا احسان کہ جانے گئے پہچانے گئے
اب کسی اور کے کیا ہوں گے یہ جب تیرے نہیں

دربدر ہو کے بھی جو تیری طرف دیکھتے تھے
وہ ترے خانماں برباد بھی اب تیرے نہیں

اب گلہ کیا کہ ہوا ہو گئے سب حلقہ بگوش
میں نہ کہتا تھا کہ یہ سہل طلب تیرے نہیں

ہو نہ ہو دل پہ کوئی بوجھ ہے بھاری ورنہ
بات کہنے کے یہ انداز یہ ڈھب تیرے نہیں

تیرے شوریدہ مزاجی کے سبب تیرے نہیں
اے مرے شہر ترے لوگ بھی اب تیرے نہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں