Mera Har Lafz Touqeer Rehne Ke Liye Hai

Mera Har Lafz Touqeer Rehne Ke Liye Hai

Mera Har Lafz Touqeer Rehne Ke Liye Hai
Mera har Khof e daman e geer rehne ke liye hai

Mein jis sheher e jamal e asaar ka mara howa hoon
Wo sara sheher be-taamer rehne ke liye hai

Main aise khawab ki padash mei maatob thehra
Jo sari umar be-tabeer rehne ke liye hai

Zara si dair mein bujh jayen gaye sb mehr o mahtab
Ye da’awa kiya keh har tanveer rehne ke liye hai

Zara si dair mein dhundla ke reh jaye ga har naqash
Guaman yeh tha keh har tasveer rehne ke liye hai

Na meri aag ki yeh shoolen baqi rahe gi
Na meri khaak ki taseer rehne ke liye hai

Na ye aab o hawa e sheher e jism o jaan duwami
Na mere dard ki jageer rehne ke liye hai

Na aqleem e honar mein azmat Ghalib salamt
Na ijaz e kalam e meer rehne ke liye hai

Kahin mehfooz hai loh e fana par aik tehreer
Bal akhir ek wohi tehreer rehne ke liye hai

Mera har lafz touqeer rehne ke liye hai
Mera har khof e daman e geer rehne
غزل
مرا ہر لفظ توقیر رہنے کیلئے ہے
مرا ہر خوف دامن گیر رہنے کیلئے ہے

میں جس شہر جمال آثار کا مارا ہوا ہوں
وہ سارا شہر بے تعمیر رہنے کیلئے ہے

میں ایسے خواب کی پاداش میں معتوب ٹھہرا
جو ساری عمر بے تعبیر رہنے کیلئے ہے

ذراسی دیر میں بجھ جایئں گے سب مہر و مہتاب
یہ دعویٰ کیا کہ ہر تنویر رہنے کیلئے ہے

ذراسی دیر میں دھندلا کے رہ جائے گا ہر نقس
گماں یہ تھا کہ ہر تصویر رہنے کیلئے ہے

نہ میری آگ کی یہ شعلیں باقی رہے گی
نہ میری خاک کی تاثیر رہنے کیلئے ہے
نہ یہ آب وہوائے شہر جسم و جاں دوامی

نہ میرے درد کی جاگیر رہنے کیلئے ہے
نہ اقلیم ہنر میں عظمت غالب سلامت
نہ اعجاز کلام میر رہنےکیلئے ہے

کہیں محفوظ ہے لوح فنا پر ایک تحریر
بالآخر اک وہی تحریر رہنے کیلئے ہئے

Poet: Iftikhar Arif

اپنا تبصرہ بھیجیں