Teri Bakhshi Hoi Wehshat Ki Ataa Lagti Hai

Teri Bakhshi Hoi Wehshat Ki Ataa Lagti Hai

Teri Bakhshi Hoi Wehshat Ki Ataa Lagti Hai
Warna moun zor udaasi meri kia lagti hai

Mujh peh aa zulm kamatay hoye insan nah dar
Bad dua lagti hai meri nah dua lagti hai

Mein parinday ko batati thi zara ghour to kar
Yeh hawa mujh ko darakhton ki sada lagti hai

Pori aati hai badan par nah zara sajti hai
Zindagi jaisay karaye ki qaba lagti hai

Ab wahan koi nahi phool sajanay wala
Ghar ki khirki mujhe aasaib zada lagti hai

Iss qadar zor chalati hoon veraani par
Itna darti hai keh deewar se ja lagti hai

Tou mere zakhm peh heran nah ho talkh mizaj
Baat pathar ki tarah jism ko aa lagti hai

Teri bakhshi hoi wehshat ki ataa lagti hai
Warna moun zor udaasi meri kia lagti hai
غزل
تیری بخشی ہوئی وحشت کی عطا لگتی ہے
ورنہ منہ زور اداسی میری کیا لگتی ہے

مجھ پہ اے ظلم کماتے ہوئے انسان نہ ڈر
بد دعا لگتی ہے میری نہ دعا لگتی ہے

میں پرندے کو بتاتی تھی ذرا غور تو کر
یہ ہوا مجھ کو درختوں کی صدا لگتی ہے

پوری آتی ہے بدن پر نہ ذرا سجتی ہے
زندگی جیسے کرائے کی قبا لگتی ہے

اب وہاں کوئی نہیں پھول سجانے والا
گھر کی کھڑکی مجھے آسیب زدہ لگتی ہے

اس قدر زور سے چلاتی ہوں ویرانی پر
اتنا ڈرتی ہے کہ دیوار سے جا لگتی ہے

تو مرے زخم پہ حیران نہ ہو تلخ مزاج
بات پتھر کی طرح جسم کو آ لگتی ہے

تیری بخشی ہوئی وحشت کی عطا لگتی ہے
ورنہ منہ زور اداسی میری کیا لگتی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں