Roz Taron Ko Numaish Mein Khalal Parta Hai

روز تاروں کی نمائش میں خلل پڑتا ہے
چاند پاگل ہے اندھیرے میں نکل پڑتا ہے

ایک دیوانہ مسافر ہے مری آنکھوں میں
وقت بے وقت ٹھہر جاتا ہے چل پڑتا ہے

اپنی تعبیر کے چکر میں مرا جاگتا خواب
روز سورج کی طرح گھر سے نکل پڑتا ہے

روز پتھر کی حمایت میں غزل لکھتے ہیں
روز شیشوں سے کوئی کام نکل پڑتا ہے

اس کی یاد آئی ہے سانسو ذرا آہستہ چلو
دھڑکنوں سے بھی عبادت میں خلل پڑتا ہے

roz taron ki numaish mein khalal padta hai
chand pagal hai andhere mein nikal padta hai
 
ek diwana musafir hai meri aankhon mein
waqt-be-waqt thahar jata hai chal padta hai
 
apni tabir ke chakkar mein mera jagta khwab
roz suraj ki tarah ghar se nikal padta hai
 
roz patthar ki himayat mein ghazal likhte hain
roz shishon se koi kaam nikal padta hai
 
us ki yaad aai hai sanso zara aahista chalo
dhadkanon se bhi ibaadat mein khalal paDta hai
 

اپنا تبصرہ بھیجیں