Ramooz Be Khudi Samjhay Nah| Ehsan Danish

Ramooz Be Khudi Samjhay Nah| Ehsan Danish

Ramooz Be Khudi Samjhay Nah Asra Iss Khudi Samjhay
Bari shai hai agar apni haqeeqat aadmi samjhay

Zia andar zia tanveer dar tanveer zou dar zou
Koi aakhir kahan tak raaz haye zindagi

Nahi hat’ti nazar anjam alam se nahi hat’ti
Usay koi khudi gardaan le yar be khudi samjhay

Bohat mushkil hai es meyaar ki randi zamane mein
Jo laghzish ko ganna aur be khudi ko zindagi samjhay

Jab ehsas bulandi paast kar deta hai fitrat ko
Yeh mushkil hai phir insan aadmi ko aadmi samjhay

Junoon ik manzil be naam ko tay karta jata hai
Kisay fursat hai jo sood-o-zayan zindagi samjhay

Hamein tou muddatun se justujoo hai aisay insan ki
Hamari zindagi ko bhi jo apni zindagi samjhay

Jala pati hai es se rooh dil baidar hota hai
Barri muddat mein hum eshan qadar-e-muflisi samjhay

Ramooz be khudi samjhay nah asra iss khudi samjhay
Bari shai hai agar apni haqeeqat aadmi samjhay
غزل
رموز بے خودی سمجھے نہ اسرار خودی سمجھے
بڑی شے ہے اگر اپنی حقیقت آدمی سمجھے

ضیا اندر ضیا تنویر در تنویر ضو در ضو
کوئی آخر کہاں تک راز ہائے زندگی

نہیں ہٹتی نظر انجام عالم سے نہیں ہٹتی
اسے کوئی خودی گردان لے یار بے خودی سمجھے

بہت مشکل ہے اس معیار کی رندی زمانے میں
جو لغزش کو گنہ اور بے خودی کو زندگی سمجھے

جب احساس بلندی پست کر دیتا ہے فطرت کو
یہ مشکل ہے پھر انساں آدمی کو آدمی سمجھے

جنوں اک منزل بے نام کو طے کرتا جاتا ہے
کسے فرصت ہے جو سود و زیان زندگی سمجھے

ہمیں تو مدتوں سے جستجو ہے ایسے انساں کی
ہماری زندگی کو بھی جو اپنی زندگی سمجھے

جلا پاتی ہے اس سے روح دل بیدار ہوتا ہے
بڑی مدت میں ہم احسان قدر مفلسی سمجھے

رموز بے خودی سمجھے نہ اسرار خودی سمجھے
بڑی شے ہے اگر اپنی حقیقت آدمی سمجھے

اپنا تبصرہ بھیجیں