Rafta Rafta Mujh Uss Ki Kamzoriyon Ka Pata Lag

Rafta Rafta Mujh Uss Ki Kamzoriyon Ka Pata Lag

Rafta Rafta Mujh Uss Ki Kamzoriyon Ka Pata Lag Raha Tha
Iss liye bhi usay chhor kar dour jana bura lag raha tha

Raat bhar gham barasne se galon peh qoos-o-qaza ban gayi thi
Subah uth kar diyon ko bujhate hoye devta lag raha tha

Iss badan ka aaroma yeh tha jo mohabbat bhari ishteeha ban giya tha
Jab woh mere gale se laga maiz peh nashta lag raha tha

Mein ne jis se mohabbat ka socha woh khud bhi yahi chahta tha
Ishq mein mere tukkay nahi lag rahe thay tu kiya lag raha tha

Rafta rafta mujh uss ki kamzoriyon ka pata lag raha tha
Iss liye bhi usay chhor kar dour jana bura lag raha tha
غزل
رفتہ رفتہ مجھے اُس کی کمزوریوں کا پتا لگ رہا تھا
اس لیے بھی اُسے چھوڑ کر دور جانا بُرا لگ رہا تھا

رات بھر غم برسنے سے گالوں پہ قوس و قضا بن گئی تھی
صبح اُٹھ کر دیوں کو بجھاتے ہوئے دیوتا لگ رہا تھا

اس بدن کا آروما یہ تھا جو محبت بھری اشتیہا بن گیا تھا
جب وہ میرے گلے سے لگا میز پہ ناشتا لگ رہا تھا

میں نے جس سے محبت کا سوچا وہ خود بھی یہی چاہتا تھا
عشق میں میرے توکے نہیں لگ رہے تھے تو کیا لگ رہا تھا

رفتہ رفتہ مجھے اُس کی کمزوریوں کا پتا لگ رہا تھا
اس لیے بھی اُسے چھوڑ کر دور جانا بُرا لگ رہا تھا

اپنا تبصرہ بھیجیں