Ajeeb Khwab Tha Es Ke Badan Mein Kayi Thi

Ajeeb Khwab Tha Es Ke Badan Mein Kayi Thi

Ajeeb Khwab Tha Es Ke Badan Mein Kayi Thi
Wo ik pari jo mujhe sabaz karne aayi thi

Wo ik chiragh kadah jis mein kuch nahi tha mera
Jo jal rahi thi wo qandeel bhi parayi thi

Na jane kitne parindon ne es mein sherkat ki
Kal aik paer ki taqreeb ro-namayi thi

Hawao aao mere gaon ki taraf dekho
Jahan yeh rait hai pehle yahan tarayi thi

Kisi sabah ne khaime laga deye hain wahan
Jahan peh mein ne nishani teri dabayi thi

Gale mila tha kabhi dukh bharay December se
Mere wajood ke andar bhi dhund chayi thi

Ajeeb Khwab Tha Es Ke Badan Mein Kayi Thi
Wo ik pari jo mujhe sabaz karne aayi thi
غزل
عجیب خواب تھا اس کے بدن میں کائی تھی
وہ اک پری جو مجھے سبز کرنے آئی تھی

وہ اک چراغ کدہ جس میں کچھ نہیں تھا مرا
جو جل رہی تھی وہ قندیل بھی پرائی تھی

نہ جانے کتنے پرندوں نے اس میں شرکت کی
کل ایک پیڑ کی تقریب رو نمائی تھی

ہواؤ آؤ میرے گاؤں کی طرف دیکھو
جہاں یہ ریت ہے پہلے یہاں ترائی تھی

کسی سباہ نے خیمے لگا دیے ہیں وہاں
جہاں پہ میں نے نشانی تری دبائی تھی

گلے ملا تھا کبھی دکھ بھرے دسمبر سے
مرے وجود کے اندر بھی دھند چھائی تھی

عجیب خواب تھا اس کے بدن میں کائی تھی
وہ اک پری جو مجھے سبز کرنے آئی تھی

اپنا تبصرہ بھیجیں