Sab Intezar Mein Thay Kab Koi Zuban Khulay

Sab Intezar Mein Thay Kab Koi Zuban Khulay

Sab Intezar Mein Thay Kab Koi Zuban Khulay
Phir uss ke hont khulay aur sab ke kaan khulay

Bhalay ho lakh haseen khawab yaad rehta nahi
Jab aankh darjanoon logon ke darmiyan khulay

Bohat sa len gay karaya zara si dein gay jagah
Yahan ke logon ke dil tang hain maakan khulay

Gaya woh shakhs tu nazren uthayen logon ne
Hawa thami to jahazoon ki badbaan khulay

Hamari aankh mein khaddar ke khawab biktay thay
Tum aaye aur yahan boski ke thaan khulay

Jagah ho iss mein kam az kam mere yaqeen ke liye
Mein chahta hoon keh itna tera gumaan khulay

Yeh kon bhool gaya unn labon ka khaka yahan
Yeh kon chor gaya gar ke martabaan khulay

Sab intezar mein thay kab koi zuban khulay
Phir uss ke hont khulay aur sab ke kaan khulay
غزل
سب اِنتظار میں تھے کب کوئی زبان کُھلے
پھر اُس کے ہونٹ کُھلے اور سب کے کان کُھلے

بھلے ہو لاکھ حسیں خواب یاد رہتا نہیں
جب آنکھ درجنوں لوگوں کے درمیان کُھلے

بہت سا لیں گے کرایہ ذرا سی دیں گے جگہ
یہاں کے لوگوں کے دل تنگ ہیں مکان کُھلے

گیا وہ شخص تو نظریں اُٹھائیں لوگوں نے
ہوا تھمی تو جہازوں کے بادبان کُھلے

ہماری آنکھ میں کھدر کے خواب بکتے تھے
تم آئے اور یہاں بوسکی کے تھان کُھلے

جگہ ہو اِس میں کم از کم مرے یقیں کے لیے
میں چاہتا ہوں کہ اِتنا ترا گمان کُھلے

یہ کون بھول گیا اُن لبوں کا خاکہ یہاں
یہ کون چھوڑ گیا گڑ کے مرتبان کُھلے

سب اِنتظار میں تھے کب کوئی زبان کُھلے
پھر اُس کے ہونٹ کُھلے اور سب کے کان کُھلے
Poet: Umair Najmi

اپنا تبصرہ بھیجیں