Ab Kaho Karwan Kidher| Ehsan Danish Shayari

Ab Kaho Karwan Kidher| Ehsan Danish Shayari

Ab Kaho Karwan Kidher Ko Chale
Raaste khoo gaye chiragh jale

Aansowon mein neha gayen khoshyar
Rooth kar jab wo aa lage hain gale

Ishq gham ko uboor kar nah saka
Raste karwaan ke saath chale

Hum peh guzri hain hijar ki raatein
Hum jahannum mein thay magar nah jale

Thay mohabbat ki ibtida ke qasoor
Who tabassum jo aansowon mein dhale

Khaak se senkron aage khurshid
Hai andhera magar chiragh tale

Chand sakit hai ruk gaye tare
Ab woh aayen tou gham ki raat dhale

Me kade ka tou zikar bhi hai gunah
Ab hayat haram pari hai gale

Pursish haal ka jawab tha kya
Hans pare hum keh jald baat tale

Ab kahu karwan kidher ko chale
Raaste khoo gaye chiragh jale
غزل
اب کہو کارواں کدھر کو چلے
راستے کھو گئے چراغ جلے

آ نسوؤں میں نہا گئیں خوشیار
روٹھ کر جب وہ آ لگے ہیں گلے

عشق غم کو عبور کر نہ سکا
راستے کارواں کے ساتھ چلے

ہم پہ گزری ہیں ہجر کی راتیں
ہم جہنم میں تھے مگر نہ جلے

تھے محبت کی ابتدا کے قصور
وہ تبسم جو آنسوؤں میں ڈھلے

خاک سے سینکڑوں اگے خورشید
ہے اندھیرا مگر چراغ تلے

چاند ساکت ہے رک گئے تارے
اب وہ آئیں تو غم کی رات ڈھلے

مے کدے کا تو ذکر بھی ہے گناہ
اب حیات حرم پڑی ہے گلے

پرسش حال کا جواب تھا کیا
ہنس پڑے ہم کہ جلد بات ٹلے

اب کہو کارواں کدھر کو چلے
راستے کھو گئے چراغ جلے
Read more click here

اپنا تبصرہ بھیجیں