Roosh Mein Gardish Siyargah Se Achi Hai

Roosh Mein Gardish Siyargah Se Achi Hai

Roosh Mein Gardish Siyargah Se Achi Hai
Zamen kahin bhi ho asmaan se achi hai

Jo harf haq ki himayt mein ho wo gumnami
Hazar wazah ke naam-o-nishaan se achi hai

Ajab nahi kal usi ki zubaan kench jaye
Jo keh raha hai khamoshi zaban se achi hai

Bs ek khoof kahin dil yeh baat maan na jaye
Ye khaak-e-ghair humein ashyaan se achi hai

Hum aise gul zadgaan ko bahar yak samaat
Nigar khan-e-ahid khazaan se achi hai

Roosh mein gardish siyargah se achi hai
Zamen kahin bhi ho asmaan se achi hai
غزل
روش میں گردش سیارگاں سے اچھی ہے
زمیں کہیں کی بھی ہو آسماں سے اچھی ہے

جو حرف حق کی حمایت میں ہو وہ گمنامی
ہزار وضع کے نام و نشاں سے اچھی ہے

عجب نہیں کل اسی کی زبان کھنچ جائے
جو کہہ رہا ہے خاموشی زباں سے اچھی ہے

بس ایک خوف کہیں دل یہ بات مان نہ جائے
یہ خاک غیر ہمیں آشیاں سے اچھی ہے

ہم ایسے گل زدگاں کو بہار یک ساعت
نگار خانۂ عہد خزاں سے اچھی ہے

روش میں گردش سیارگاں سے اچھی ہے
زمیں کہیں کی بھی ہو آسماں سے اچھی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں