Muddat hui hai yaar ko mehman kiye hue

مدت ہوئی ہے یار کو مہماں کیے ہوئے
جوش قدح سے بزم چراغاں کیے ہوئے
کرتا ہوں جمع پھر جگر لخت لخت کو
عرصہ ہوا ہے دعوت مژگاں کیے ہوئے
پھر وضع احتیاط سے رکنے لگا ہے دم
برسوں ہوئے ہیں چاک گریباں کیے ہوئے
پھر گرم نالہ ہائے شرربار ہے نفس
مدت ہوئی ہے سیر چراغاں کیے ہوئے
پھر پرسش جراحت دل کو چلا ہے عشق
سامان صدہزار نمکداں کیے ہوئے
پھر بھر رہا ہوں خامۂ مژگاں بہ خون دل
ساز چمن طرازی داماں کیے ہوئے
باہم دگر ہوئے ہیں دل و دیدہ پھر رقیب
نظارہ و خیال کا ساماں کیے ہوئے
دل پھر طواف کوئے ملامت کو جائے ہے
پندار کا صنم کدہ ویراں کیے ہوئے
پھر شوق کر رہا ہے خریدار کی طلب
عرض متاع عقل و دل و جاں کیے ہوئے
دوڑے ہے پھر ہر ایک گل و لالہ پر خیال
صد گلستاں نگاہ کا ساماں کیے ہوئے
پھر چاہتا ہوں نامۂ دل دار کھولنا
جاں نذر دل فریبی عنواں کیے ہوئے
مانگے ہے پھر کسی کو لب بام پر ہوس
زلف سیاہ رخ پہ پریشاں کیے ہوئے
چاہے ہے پھر کسی کو مقابل میں آرزو
سرمے سے تیز دشنۂ مژگاں کیے ہوئے
اک نو بہار ناز کو تاکے ہے پھر نگاہ
چہرہ فروغ مے سے گلستاں کیے ہوئے
پھر جی میں ہے کہ در پہ کسی کے پڑے رہیں
سر زیر بار منت درباں کیے ہوئے
جی ڈھونڈتا ہے پھر وہی فرصت کہ رات دن
بیٹھے رہیں تصور جاناں کیے ہوئے
غالبؔ ہمیں نہ چھیڑ کہ پھر جوش اشک سے
بیٹھے ہیں ہم تہیۂ طوفاں کیے ہوئے
muddat hui hai yar ko mehman kiye hue
josh-e-qadah se bazm charaghan kiye hue

karta hun jama phir jigar-e-lakht-lakht ko
arsa hua hai dawat-e-mizhgan kiye hue

phir waz-e-ehtiyat se rukne laga hai dam
barson hue hain chaak gareban kiye hue

phir garm-nala-ha-e-sharar-bar hai nafas
muddat hui hai sair-e-charaghan kiye hue

phir pursish-e-jarahat-e-dil ko chala hai ishq
saman-e-sad-hazar namak-dan kiye hue

phir bhar raha hun khama-e-mizhgan ba-khun-e-dil
saz-e-chaman taraazi-e-daman kiye hue

baham-digar hue hain dil o dida phir raqib
nazzara o khayal ka saman kiye hue

dil phir tawaf-e-ku-e-malamat ko jae hai
pindar ka sanam-kada viran kiye hue

phir shauq kar raha hai kharidar ki talab
arz-e-mata-e-aql-o-dil-o-jaan kiye hue

dauDe hai phir har ek gul-o-lala par khayal
sad-gulistan nigah ka saman kiye hue

phir chahta hun nama-e-dildar kholna
jaan nazr-e-dil-farebi-e-unwan kiye hue

mange hai phir kisi ko lab-e-baam par hawas
zulf-e-siyah rukh pe pareshan kiye hue

chahe hai phir kisi ko muqabil mein aarzu
surme se tez dashna-e-mizhgan kiye hue

ek nau-bahaar-e-naz ko take hai phir nigah
chehra farogh-e-mai se gulistan kiye hue

phir ji mein hai ki dar pe kisi ke pade rahen
sar zer-bar-e-minnat-e-darban kiye hue

ji dhundta hai phir wahi fursat ki raat din
baithe rahen tasawwur-e-jaanan kiye hue
ghaalib’ hamein na chhedki phir josh-e-ashk se
baithe hain hum tahayya-e-tufan kiye hue

اپنا تبصرہ بھیجیں