To Phir Udaasiyan Logn Ki Kam Zyada Nah Hoon

To Phir Udaasiyan Logn Ki Kam Zyada Nah Hoon

To Phir Udaasiyan Logn Ki Kam Zyada Nah Hoon
Yeh hadsaat agar aik dam zyada nah hoon

Har aik cheez ki kasrat kharab karti hai
Tou khud mein jhank kabhi, dekh hum zyada nah hoon

Kisi ka hijr manana tumhari marzi hai
Bas itna dhyan rahe aankhen num zyada nah hoon

Hai meri katab-e-taqdeer se aik dua
Keh loh-e-hijr peh girye raqam zyada nah hoon

Mein kia karon keh becharnay ka khauf jata rahe
Mere yeh log aseer-e-adam zyada nah hoon

Koi to rasta jaye faqt khushi ki taraf
Sarak sappat rahe pech-o-kham zyada nah hoon

Munafiqat nahi aati wagarna mere addu
Kabhi bhi dost khuda ki qasam zyada nah hoon

Tu phir udaasiyan logn ki kam zyada nah hoon
Yeh hadsaat agar aik dam zyada nah hoon
غزل
تو پھر اداسیاں لوگوں کی کم زیادہ نہ ہوں
یہ حادثات اگر ایک دم زیادہ نہ ہوں

ہر ایک چیز کی کثرت خراب کرتی ہے
تو خود میں جھانک کبھی ، دیکھ ہم زیادہ نہ ہوں

کسی کا ہجر منانا تمہاری مرضی ہے
بس اتنا دھیان رہے آنکھیں نم زیادہ نہ ہوں

ہے میری کاتبِ تقدیر سے یہ ایک دعا
کہ لوحِ ہجر پہ گریے رقم زیادہ نہ ہوں

میں کیا کروں کہ بچھڑنے کا خوف جاتا رہے
مرے یہ لوگ اسیرِ عدم زیادہ نہ ہوں

کوئی تو راستہ جائے فقط خوشی کی طرف
سڑک سپاٹ رہے پیچ و خم زیادہ نہ ہوں

منافقت نہیں آتی وگرنہ میرے عدو
کبھی بھی دوست خدا کی قسم زیادہ نہ ہوں

تو پھر اداسیاں لوگوں کی کم زیادہ نہ ہوں
یہ حادثات اگر ایک دم زیادہ نہ ہوں
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں