Jahan Se Wapsi Mumkin Ho Aisay Dhab Peh Khulay

Jahan Se Wapsi Mumkin Ho Aisay Dhab Peh Khulay

Jahan Se Wapsi Mumkin Ho Aisay Dhab Peh Khulay
Kisi tarah koi rasta mere aqab peh khulay

Mein qaid-e-ishq mein be mout marnay wali thi
Yeh chand rozan-e-zindaan meri talab peh khulay

Tumhein saleeqa kahan koi gham baratnay ka
Adab ki baat hai kia aik be adab peh khulay

Kabhi kabhi yeh tamanna bhi lab peh jagti hai
Kabhi tu harf-e-tamanna tumharay lab peh khulay

Yeh kuch chiragh banany mein kaisay umar lagi
Hamari sakht mushaqqat hi roz-o-shab peh khulay

Tou apne bughz-o-hasad mein para howa hai to kyun
Maqam-e-mula ali tujh se kam nasab peh khulay

Diyar-e-dil hai sada rehne wala hai
Mere kalam misra nahi keh sab peh khulay

Jahan se wapsi mumkin ho aisay dhab peh khulay
Kisi tarah koi rasta mere aqab peh khulay
غزل
جہاں سے واپسی ممکن ہو ایسے ڈھب پہ کھلے
کسی طرح کوئی رستہ مرے عقب پہ کھلے

میں قیدِ عشق میں بے موت مرنے والی تھی
یہ چند روزنِ زندان مری طلب پہ کھلے

تمہیں سلیقہ کہاں کوئی غم برتنے کا
ادب کی بات ہے کیا ایک بے ادب پہ کھلے

کبھی کبھی یہ تمنا بھی لب پہ جاگتی ہے
کبھی تو حرفِ تمنا تمہارے لب پہ کھلے

یہ کچھ چراغ بنانے میں کیسے عمر لگی
ہماری سخت مشقت ہی روز و شب پہ کھلے

تو اپنے بغض و حسد میں پڑا ہوا ہے تو کیوں
مقامِ مولا علی تجھ سے کم نسب پہ کھلے

دیار دل ہے سدا رہنے والا ہے
مرے کلام مصرع نہیں کہ سب پہ کھلے

جہاں سے واپسی ممکن ہو ایسے ڈھب پہ کھلے
کسی طرح کوئی رستہ مرے عقب پہ کھلے
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں