Magar Ye Zakhm Ye Marham

تمہارے نام تمہارے نشاں سے بے سروکار
تمہاری یاد کے موسم گزرتے جاتے ہیں
بس ایک منظر بے ہجر و وصل ہے جس میں
ہم اپنے آپ ہی کچھ رنگ بھرتے جاتے ہیں
نہ وہ نشاط تصور کہ لو تم آ ہی گئے
نہ زخم دل کی ہے سوزش کوئی جو سہنی ہو
نہ کوئی وعدہ و پیماں کی شام ہے نہ سحر
نہ شوق کی ہے کوئی داستاں جو کہنی ہو
نہیں جو محمل لیلائے آرزو سر راہ
تو اب فضا میں فضا کے سوا کچھ اور نہیں
نہیں جو موج صبا میں کوئی شمیم پیام
تو اب صبا میں صبا کے سوا کچھ اور نہیں
اتار دے جو کنارے پہ ہم کو کشتیٔ‌‌ وہم
تو گرد و پیش کو گرداب ہی سمجھتے ہیں
تمہارے رنگ مہکتے ہیں خواب میں جب بھی
تو خواب میں بھی انہیں خواب ہی سمجھتے ہیں
نہ کوئی زخم نہ مرہم کہ زندگی اپنی
گزر رہی ہے ہر احساس کو گنوانے میں
مگر یہ زخم یہ مرہم بھی کم نہیں شاید
کہ ہم ہیں ایک زمیں پر اور اک زمانے میں
tumhaare nam tumhaare nishan se be-sarokar
tumhaari yaad ke mausam guzarte jate hain
 
bas ek manzar-e-be-hijr-o-visal hai jis mein
hum apne aap hi kuchh rang bharte jate hain
 
na wo nashat-e-tasawwur ki lo tum aa hi gae
na zakhm-e-dil ki hai sozish koi jo sahni ho
 
na koi wada-o-paiman ki sham hai na sahar
na shauq ki hai koi dastan jo kahni ho
 
nahin jo mahmil-e-laila-e-arzu sar-e-rah
to ab faza mein faza ke siwa kuchh aur nahin
 
nahin jo mauj-e-saba mein koi shamim-e-payam
to ab saba mein saba ke siwa kuchh aur nahin
 
utar de jo kinare pe hum ko kashti-e-wahm
to gird-o-pesh ko girdab hi samajhte hain
 
tumhaare rang mahakte hain khwab mein jab bhi
to khwab mein bhi unhen khwab hi samajhte hain
 
na koi zakhm na marham ki zindagi apni
guzar rahi hai har ehsas ko ganwane mein
 
magar ye zakhm ye marham bhi kam nahin shayad
ki hum hain ek zamin par aur ek zamane mein

اپنا تبصرہ بھیجیں