Kushta Hi Kiye Jata Hai Dikhla Ke Aada To

Kushta Hi Kiye Jata Hai Dikhla Ke Aada To

Kushta Hi Kiye Jata Hai Dikhla Ke Aada To
Samjhe hai mian apne tayein khud ko khuda to

Galiyon mein phira bhi hai kabho chak gariban to
To aur kahe khud meer sa khud ko aabhe ja to

Jis ny tumein insan ki izzat na sekhayi
Kis peer tamaa-khor ki sohbat mein raha to

Jis ke liye tarap sakun aisa nasha nahi hai to
Kaisay mein pur karon tujhe mera khala nahi hai to

Jin se to mil raha hai na inko teri khabar kahan
Tera pata tou es ko hai jis ko mila nahi hai to

Itna qareeb ho ke bhi chain nahi tujhe to phir
Saaf si baat hai mian apni jaga nahi hai to

Naam-e-khuda pe mufitia shehar ke shehar kha gaya
Kuch tou khuda ka khauf kar yani thaka nahi hai to

Kushta hi kiye jata hai dikhla ke aada to
Samjhe hai mian apne tayein khud ko khuda to
غزل
کشتہ ہی کیے جاتا ہے دکھلا کے ادا تو
سمجھے ہے میاں اپنے تئیں خود کو خدا تو

گلیوں میں پھرا بھی ہے کبھو چاک گریباں تو
تو اور کہے خود میر سا خود کو ابھے جا تو

جس نے تمھیں انسان کی عزت نہ سکھائی
کس پِیرِ طمع خور کی صحبت میں رہا تو

جس کے لیے تڑپ سکوں ایسا نشا نہیں ہے تو
کیسے میں پر کروں تجھے میرا خلا نہیں ہے تو

جن سے تو مل رہا ہے نا انکو تیری خبر کہاں
تیرا پتا تو اس کو ہے جس کو ملا نہیں ہے تو

اتنا قریب ہو کے بھی چین نہیں تجھے تو پھر
صاف سی بات ہے میاں اپنی جگہ نہیں ہے تو

نامِ خدا پہ مفتیا شہر کے شہر کھا گیا
کچھ تو خدا کا خوف کر یعنی تھکا نہیں ہے تو

کشتہ ہی کیے جاتا ہے دکھلا کے ادا تو
سمجھے ہے میاں اپنے تئیں خود کو خدا تو

اپنا تبصرہ بھیجیں