Hakim Ko Mere Hal Se Rughbat Nahi Koi

Hakim Ko Mere Hal Se Rughbat Nahi Koi

Hakim Ko Mere Hal Se Rughbat Nahi Koi
Barish ka sar peh zor hai aur chhat nahi koi

Selaab le geya mere tan ka libaas bhi
Herat hai ab bhi aap ko herat nahi koi

Har shai ke narkh barh gaye afsos iss ka hai
Insaan ki mere dais mein qeemat nahi koi

Ik din hawaye waqt ki zad mein tou aaye ga
Aur aaye gi sadaa tujhe mohlat nahi koi

Malik mere sabhi raza kaaron ki khair ho
Iss kar-e-khair se bari azmat nahi koi

Hakim ko mere hal se rughbat nahi koi
Barish ka sar peh zor hai aur chhat nahi koi
غزل
حاکم کو میرے حال سے رغبت نہیں کوئی
بارش کا سر پہ زور ہے اور چھت نہیں کوئی

سیلاب لے گیا مرے تن کا لباس بھی
حیرت ہے اب بھی آپ کو حیرت نہیں کوئی

ہر شے کے نرخ بڑھ گئے، افسوس اس کا ہے
انساں کی میرے دیس میں قیمت نہیں کوئی

اک دن ہوائے وقت کی زد میں تُو آئے گا
اور آئے گی صدا تجھے مہلت نہیں کوئی

مالک مرے سبھی رضا کاروں کی خیر ہو
اِس کارِ خیر سے بڑی عظمت نہیں کوئی

حاکم کو میرے حال سے رغبت نہیں کوئی
بارش کا سر پہ زور ہے اور چھت نہیں کوئی
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں