Yeh Jabar Maah-O-Saal Mein Ghari Hoi| Nazam

Yeh Jabar Maah-O-Saal Mein Ghari Hoi| Nazam

Yeh Jabar Maah-O-Saal Mein Ghari Hoi Zameen Meri Gawah Hai
Nishat ki abd kinar manzilon mein aik 

umar se en kareem aur jamil saaton ka muntazir hoon
Jin ki baaz gasht se mere wajood ki sadaqatoon ka inkishaf ho

Khuda kare bashartein sunane wale khoosh kalam tairon ki tolyian
ufaq se shakh gull talak alamat wisaal ki lakeeren khench dein

Lahoo ki wusatoon ka inkishaf ho
Lahoo ki azmatoon ka inkishaf ho
Badan ke raste wajood ki sadaqatoon ka inkishaf ho

Yeh jabar maah-o-saal mein ghari hoi zameen meri gawah hai
Nishat ki abd kinar manzilon mein aik
نظم
یہ جبر ماہ و سال میں گھری ہوئی زمیں مری گواہ ہے
نشاط کی ابد کنار منزلوں میں ایک

 عمر سے میں ان کریم اور جمیل ساعتوں کا منتظر ہوں
جن کی باز گشت سے مرے وجود کی صداقتوں کا انکشاف ہو

خدا کرے بشارتیں سنانے والے خوش کلام طائروں کی ٹولیاں
افق سے شاخ گل تلک علامت وصال کی لکیریں کھینچ دیں

لہو کی وسعتوں کا انکشاف ہو
لہو کی عظمتوں کا انکشاف ہو
بدن کے راستے وجود کی صداقتوں کا انکشاف ہو

اپنا تبصرہ بھیجیں