Manzilon Ke Nishan Nahin Milte

شاعر:قمرمرادآبادی
غزل
منزلوں کے نشاں نہیں ملتے
تم اگر ناگہاں نہیں ملتے

آشیانے کا رنج کون کرے
چار تنکے کہاں نہیں ملتے

داستانیں ہزار ملتی ہیں
صاحب داستاں نہیں ملتے

یوں نہ ملنے کے سو بہانے ہیں
ملنے والے کہاں نہیں ملتے

انقلاب جہاں ارے توبہ
ہم جہاں تھے وہاں نہیں ملتے

دوستوں کی کمی نہیں ہمدم
ایسے دشمن کہاں نہیں ملتے

جن کو منزل سلام کرتی تھی
آج وہ کارواں نہیں ملتے

شاخ گل پر جو جھومتے تھے قمرؔ
آج وہ آشیاں نہیں ملتے
Ghazal
Manzilon Ke Nishan Nahin Milte
Tum agar na-gahan nahin milte

Aashiyane ka ranj kaun kare
Chaar tinke kahan nahin milte

Dastanen hazar milti hain
Sahib-e-dastan nahin milte

Yun na milne ke sau bahane hain
Milne wale kahan nahin milte

Inqilab-e-jahan are tauba
Hum jahan the wahan nahin milte

Doston ki kami nahin hamdam
Aise dushman kahan nahin milte

Jin ko manzil salam karti thi
Aaj wo karwan nahin milte

Shakh-e-gul par jo jhumte the ‘qamar’
Aaj wo aashiyan nahin milte

اپنا تبصرہ بھیجیں