Tera Ghar Aur Mera Jangal Bheegta Hai Saath

Tera Ghar Aur Mera Jangal Bheegta Hai Saath

Tera Ghar Aur Mera Jangal Bheegta Hai Saath Saath
Aisi barsaten keh badal bheegta hai saath saath

Bachne ka saath hai phir aik se donon ke dukh
Raat ka aur mere aanchal bheegta hai saath saath

Woh ajab duniya keh sab khanjar bakaf phirte hain aur
Kanch ke piyalon mein sandal bheegta hai saath saath

Barish sang malamat mein bhi woh hum rah hai
Mein bhi bheegon khud bhi pagal bheegta hai saath saath

Barishen jare ki aur tanha bohat mera kisan
Jisma aur aikluta kambal bheegta hai saath saath

Tera ghar aur mera jangal bheegta hai saath saath
Aisi barsaten keh badal bheegta hai saath saath
غزل
تیرا گھر اور میرا جنگل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ
ایسی برساتیں کہ بادل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

بچنے کا ساتھ ہے پھر ایک سے دونوں کے دکھ
رات کا اور میرا آنچل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

وہ عجب دنیا کہ سب خنجر بکف پھرتے ہیں اور
کانچ کے پیالوں میں صندل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

بارش سنگ ملامت میں بھی وہ ہم راہ ہے
میں بھی بھیگوں خود بھی پاگل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

لڑکیوں کے دکھ عجب ہوتے ہیں سکھ اُس سے عجیب
ہنس رہی ہیں اور کاجل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

بارشیں جاڑے کی اور تنہا بہت میرا کسان
جسم اور اکلوتا کمبل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

تیرا گھر اور میرا جنگل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ
ایسی برساتیں کہ بادل بھیگتا ہے ساتھ ساتھ

اپنا تبصرہ بھیجیں