Aah Ko Chahiye Ek Umar Asar Hone Tak

آہ کو چاہیے اک عمر اثر ہوتے تک
کون جیتا ہے تری زلف کے سر ہوتے تک
دام ہر موج میں ہے حلقۂ صد کام نہنگ
دیکھیں کیا گزرے ہے قطرے پہ گہر ہوتے تک
عاشقی صبر طلب اور تمنا بیتاب
دل کا کیا رنگ کروں خون جگر ہوتے تک
تا قیامت شب فرقت میں گزر جائے گی عمر
سات دن ہم پہ بھی بھاری ہیں سحر ہوتے تک
ہم نے مانا کہ تغافل نہ کرو گے لیکن
خاک ہو جائیں گے ہم تم کو خبر ہوتے تک
پرتو خور سے ہے شبنم کو فنا کی تعلیم
میں بھی ہوں ایک عنایت کی نظر ہوتے تک
یک نظر بیش نہیں فرصت ہستی غافل
گرمیٔ بزم ہے اک رقص شرر ہوتے تک
غم ہستی کا اسدؔ کس سے ہو جز مرگ علاج
شمع ہر رنگ میں جلتی ہے سحر ہوتے تک
aah ko chahiye ek umr asar hote tak
kaun jita hai teri zulf ke sar hote tak
dam-e-har-mauj mein hai halqa-e-sad-kaam-e-nahang
dekhen kya guzre hai qatre pe guhar hote tak
aashiqi sabr-talab aur tamanna betab
dil ka kya rang karun khun-e-jigar hote tak
ta-qayamat shab-e-furqat mein guzar jaegi umr
sat din hum pe bhi bhaari hain sahar hote tak
hum ne mana ki taghaful na karoge lekin
khak ho jaenge hum tum ko khabar hote tak
partaw-e-khur se hai shabnam ko fana ki talim
main bhi hun ek inayat ki nazar hote tak
yak nazar besh nahin fursat-e-hasti ghafil
garmi-e-bazm hai ek raqs-e-sharar hote tak
gham-e-hasti ka ‘asad’ kis se ho juz marg ilaj
shama har rang mein jalti hai sahar hote tak

اپنا تبصرہ بھیجیں