Sargizsht Apni Raqam Karte Rahe

Sargizsht Apni Raqam Karte Rahe

Sargizsht Apni Raqam Karte Rahe
Aap kehte aur hum karte rahe

Bazam saqi se uthane ki hamein
Koshishen duniya ke gham karte rahe

Subah-o-sham-o-rooz-o-shab allah se
Teri batein aye sanam karte rahe

Zindagi bharti rahi jaam safal
Hum usay pi pi ke kam karte rahe

Dalte aansu kisi par kia asar
Baishtar daman hi nam karte rahe

Be bas-o-majboor kar deta hai ishq
Hum gawara har sitam karte rahe

Hans ke tar khana kabhi bhoole nahi
Woh hamesha yeh karam karte rahe

Sargizsht apni raqam karte rahe
Aap kehte aur hum karte rahe
غزل
سرگزشت اپنی رقم کرتے رہے
آپ کہتے اور ہم کرتے رہے

بزم ساقی سے اُٹھانے کی ہمیں
کوششیں دنیا کے غم کرتے رہے

صبح و شام و روز و شب اللہ سے
تیری باتیں اے صنم کرتے رہے

زندگی بھرتی رہی جام سفال
ہم اُسے پی پی کے کم کرتے رہے

ڈالتے آنسو کسی پر کیا اثر
بیشتر دامن ہی نم کرتے رہے

بے بس و مجبور کر دیتا ہے عشق
ہم گوارا ہر ستم کرتے رہے

ہنس کے ٹرخانا کبھی بھولے نہیں
وہ ہمیشہ یہ کرم کرتے رہے

اپنا تبصرہ بھیجیں