Yaad Use Bhi Ek Adhura Afsana To Hoga

یاد اسے بھی ایک ادھورا افسانہ تو ہوگا
کل رستے میں اس نے ہم کو پہچانا تو ہوگا

ڈر ہم کو بھی لگتا ہے رستے کے سناٹے سے
لیکن ایک سفر پر اے دل اب جانا تو ہوگا

کچھ باتوں کے مطلب ہیں اور کچھ مطلب کی باتیں
جو یہ فرق سمجھ لے گا وہ دیوانہ تو ہوگا

دل کی باتیں نہیں ہے تو دلچسپ ہی کچھ باتیں ہوں
زندہ رہنا ہے تو دل کو بہلانا تو ہوگا

جیت کے بھی وہ شرمندہ ہے ہار کے بھی ہم نازاں
کم سے کم وہ دل ہی دل میں یہ مانا تو ہوگا

yaad use bhi ek adhura afsana to hoga
kal raste mein us ne hum ko pahchana to hoga
Dar hum ko bhi lagta hai raste ke sannate se
lekin ek safar par ai dil ab jaana to hoga
kuchh baaton ke matlab hain aur kuchh matlab ki baaten
jo ye farq samajh lega wo diwana to hoga
dil ki baaten nahin hai to dilchasp hi kuchh baaten hon
zinda rahna hai to dil ko bahlana to hoga
jit ke bhi wo sharminda hai haar ke bhi hum nazan
kam se kam wo dil hi dil mein ye mana to hoga

اپنا تبصرہ بھیجیں