Ku Ba Ku Phail Gai Baat Shanasai Ki

Ku Ba Ku Phail Gai Baat Shanasai Ki

Ku Ba Ku Phail Gai Baat Shanasai Ki
Uss ne khushboo ki tarah meri pazeerai ki

Kaise kehh dun keh mujhe chhor diya uss ne
Baat to such hai magar hai rooswai ki
 
Woh kahin bhi gaya loota to mere pass aaya
Bas yahi baat hai achhi mere harjai ki
 
Tera pehlo tere dil ki tarah aabad rahe
Tujh peh guzray nah qayamat shab-e-tanhai ki
 
Uss ne jatli hoi paishani peh jab haath rakha
Rooh tak aa gayi taseer maseehai ki
 
Ab bhi barsaat ki raaton mein badan tootta hai
Jaag uthi hain ajab khwahishen angrai ki
 
Ku ba ku phail gai baat shanasai ki
Uss ne khushboo ki tarah meri pazeerai ki
غزل
کو بہ کو پھیل گئی بات شناسائی کی
اُس نے خوشبو کی طرح میری پذیرائی کی
 
کیسے کہہ دوں کہ مجھے چھوڑ دیا ہے اُس نے
بات تو سچ ہے مگر بات ہے رسوائی کی
 
وہ کہیں بھی گیا لوٹا تو مرے پاس آیا
بس یہی بات ہے اچھی مرے ہر جائی کی
 
تیرا پہلو ترے دل کی طرح آباد رہے
تجھ پہ گزرے نہ قیامت شب تنہائی کی
 
اس نے جلتی ہوئی پیشانی پہ جب ہاتھ رکھا
روح تک آ گئی تاثیر مسیحائی کی
 
اب بھی برسات کی راتوں میں بدن ٹوٹتا ہے
جاگ اُٹھی ہیں عجب خواہشیں انگڑائی کی
 
کو بہ کو پھیل گئی بات شناسائی کی
اُس نے خوشبو کی طرح میری پذیرائی کی

اپنا تبصرہ بھیجیں