Gham Ki Uss Sal Ko Kabhi Bhi Nah Aamjh Paye Gi

Gham Ki Uss Sal Ko Kabhi Bhi Nah Aamjh Paye Gi

Gham Ki Uss Sal Ko Kabhi Bhi Nah Aamjh Paye Gi
Tou mere dil ko kabhi bhi nah samjh paye gi

Mujh ko tasleem teri sari zahanat liken
Mujh se jahil ko kabhi bhi nah samjh paye gi

Pooch le mujh se haqeqaat tu wagarna apne
Aankh ke til ko kabhi bhi nah samjh paye gi

Bin mohabbat ke to hansti hoi un aankhon ki
Bheegi jhalmal ko kabhi na samjh paye gi

Zindagi khud tujhe marna pare ga warna
Mere qatil ko kabhi bhi nah samjh paye gi

Gham ki uss sal ko kabhi bhi nah samjh paye gi
Tou mere dil ko kabhi bhi nah samjh paye gi
غزل
غم کی اس سال کو کبھی بھی نہ سمجھ پائے گی
تو میرے دل کو کبھی بھی نہ سمجھ پائے گی

مجھ کو تسلیم تری ساری ذہانت لیکن
مجھ سے جاہل کو کبھی بھی نہ سمجھ پائے گی

پوچھ لے مجھ سے حقیقت تو وگرنہ اپنے
آنکھ کے تل کو کبھی بھی نہ سمجھ پائے گی

بن محبت کے تو ہنستی ہوئی ان آنکھوں کی
بھیگی جھلمل کو کبھی نہ سمجھ پائے گی

زندگی خود تجھے مرنا پڑے گا ورنہ
میرے قاتل کو کبھی بھی نہ سمجھ پائے گی

غم کی اس سال کو کبھی بھی نہ سمجھ پائے گی
تو میرے دل کو کبھی بھی نہ سمجھ پائے گی

اپنا تبصرہ بھیجیں