Khawab Ki Tarha Bikhar Jane Ko Jee Chahta Hai

Khawab Ki Tarha Bikhar Jane Ko Jee Chahta Hai

Khawab Ki Tarha Bikhar Jane Ko Jee Chahta Hai
Aisi tanhai keh mar jane ko jee chahta hai

Ghar ke wishaat se larzta hoon magar jane kyu
Sham hoti hai tou ghar jane ko jee chahta hai

Doob jaon tou koi mooj-e-nishaan tak na bataye
Aisi nadi main utar jane ko jee chahta hai

Kabhi mil jaye tou rastay ki thakan jag jaye
Aisi manzil se guzar jane ko jee chahta hai

Wohi pemaan jo kabhi jee ko khush aya tha bahut
Usi pemaan se mukar jane ko jee chahta hai

Khawab ki tarha bikhar jane ko jee chahta hai
Aisi tanhai keh mar jane ko jee chahta hai
غزل
خواب کی طرح بکھر جانے کو جی چاہتا ہے
ایسی تنہائی کہ مر جانے کو جی چاہتا ہے

گھر کی وحشت سے لرزتا ہوں مگر جانے کیوں
شام ہوتی ہے تو گھر جانے کو جی چاہتا ہے

ڈوب جاؤں تو کوئی موج نشاں تک نہ بتائے
ایسی ندی میں اتر جانے کو جی چاہتا ہے

کبھی مل جائے تو رستے کی تھکن جاگ جائے
ایسی منزل سے گزر جانے کو جی چاہتا ہے

وہی پیماں جو کبھی جی کو خوش آیا تھا بہت
اُسی پیماں سے مکر جانے کو جی چاہتا ہے

خواب کی طرح بکھر جانے کو جی چاہتا ہے
ایسی تنہائی کہ مر جانے کو جی چاہتا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں