Dost Kya Khud Ko Bhi Pursish Ki Ijazat Nahi Di

Dost Kya Khud Ko Bhi Pursish Ki Ijazat Nahi Di

Dost Kya Khud Ko Bhi Pursish Ki Ijazat Nahi Di
Dil ko khoon hone diya aankh ko zehmat nahi di

Hum bhi es silsila-e-ishq mein bait hain jaise
Hijar ne dukh na diya wasl ne rahat nahi di

Hum bhi ek sham bahut uljhay howay thay khud mein
Aik sham es ko bhi halat ne mohlat nahi di

Aajzi bakhshi gayi tamkanat faqr ke sath
Dene wale ne humein kon se daulat nahi di

Be wafa dost kabhi laut ke aaye tou nahi
Hum ne izhar-e-nidamat ki aziyat nahi di

Dil kabhi khwab ke peechay kabhi duniya ki taraf
Aik ne ajar diya aik ne ujrat nahi di

Dost kya khud ko bhi pursish ki ijazat nahi di
Dil ko khoon hone diya aankh ko zehmat nahi di
غزل
دوست کیا خود کو بھی پرسش کی اجازت نہیں دی
دل کو خوں ہونے دیا آنکھ کو زحمت نہیں دی

ہم بھی اس سلسلہ عشق میں بیعت ہیں جیسے
ہجر نے دکھ نہ دیا وصل نے راحت نہیں دی

ہم بھی اک شام بہت الجھے ہوئے تھے خود میں
ایک شام اس کو بھی حالات نے مہلت نہیں دی

عاجزی بخشی گئی تمکنت فقر کے ساتھ
دینے والے نے ہمیں کون سی دولت نہیں دی

بے وفا دوست کبھی لوٹ کے آئے تو انہیں
ہم نے اظہار ندامت کی اذیت نہیں دی

دل کبھی خواب کے پیچھے کبھی دنیا کی طرف
ایک نے اجر دیا ایک نے اُجرت نہیں دی

دوست کیا خود کو بھی پرسش کی اجازت نہیں دی
دل کو خوں ہونے دیا آنکھ کو زحمت نہیں دی

اپنا تبصرہ بھیجیں