Yeh Jo Duniya Mere Zakhmon Peh Fida

Yeh Jo Duniya Mere Zakhmon Peh Fida

Yeh Jo Duniya Mere Zakhmon Peh Fida Hogai Hai
Surkh honton se mere haq mein dua hogayi hai

Zid banane se muhabbat nahi hoti mere dost
Tu jo kehta tha tujhe hoge bata hogai hai

Yeh jo sajde mein gaya phir nahi wapis aaya
Tum ne parh le hai magar es ki ada hogai hai

Mujh ko sar mast howa dekh ke majno ne kaha
Es ko bhi sharbati aankhon ki saza hogai hai

Dukh tou yeh hai keh palat kar nahi dekha tu ne
Kaisi larki thi tere ishq main kia hogai hai

Munkar-e-haq hai magar pyar howa hai usko
Ek muhlat peh mere raab ki ataa hogai hai

Yeh jo duniya mere zakhmon peh fida hogai hai
Surkh honton se mere haq mein dua hogayi hai
غزل
یہ جو دنیا میرے زخموں پہ فدا ہوگئی ہے
سرخ ہونٹوں سے میرے حق میں دعا ہوگئی ہے

ضد بنانے سے محبت نہیں ہوتی میرے دوست
توجوکہتا تھا تجھے ہوگی بتا ہوگئی ہے

یہ جو سجدے میں گیا پھر نہیں واپس آیا
تم نے پڑھ لی ہے مگراِس کی ادا ہوگئی ہے

مجھ کو سرمست ہوا دیکھ کے مجنوں نے کہا
اس کو بھی شربتی آنکھوں کی سزا ہو گئی ہے

دکھ تو یہ ہے کہ پلٹ کر نہیں دیکھا تو نے
کیسی لڑکی تھی تیرے عشق میں کیا ہو گئی ہے

منکرِ حق ہے مگر پیار ہوا ہے اُس کو
ایک مہلت پہ میرے رب کی عطا ہوگئی ہے

یہ جو دنیا میرے زخموں پہ فدا ہوگئی ہے
سرخ ہونٹوں سے میرے حق میں دعا ہوگئی ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں