Chadar Ki Izzat Kerta Hun Aur Perday Ko Mantaa

Ghazal :
Chadar Ki Izzat Karta Hun Aur Parde Ko Mantaa Hun
Har parda parda nahi hota itna main bhi janta hun
 
Sare mard hi aik jaise hain tum ne kaise kah dala
Main bhi to aik mard hun tum ko khud se behtar mantaa hun
 
Mujhko pata hai wo gussae main kis had tak ja sakti hai
Apni zuban pe qabo rakho main us ko pahchanta hun
 
Main ne us se pyar kia hai milkiyat ka dawa nahi
Wo jis ke bhi sath hai main us ko bhi apna manta hun
غزل
چادر کی عزت کرتا ہوں اور پردے کو مانتا ہوں
ہر پردا پردا نہیں ہوتا اتنا میں بھی جانتا ہوں
 
سارے مرد ہی ایک جیسے ہیں تم نے کیسے کہہ ڈالا
میں بھی تو ایک مرد ہوں تم کو خود سے بہتر مانتا ہوں
 
مجھکو پتہ ہے وہ غصے میں کس حد تک جاسکتی ہے
اپنی زباں پہ قابو رکھو میں اُس کو پہچانتا ہوں
 
میں نے اُس سے پیار کیا ہے ملکیت کا دعوہ نہیں
وہ جس کے بھی ساتھ ہے میں اُس کو بھی اپنا مانتا ہوں

اپنا تبصرہ بھیجیں