Zakhmo Nay Mujh Main Darwazay Kholay Hain

Ghazal
Zakhmo Ne Mujh Main Darwaze Khole Hain
Main ne waqt se pehle tanke khole hain

Bahar ane ki bhi sakt nahi ham main
Tu ne kis moosam main penajre khole hain

Kon humari piyas pe daka daal gaya
Kis ne mushkizion ke tasme khole hain

Youn to mujhe kitne khat musool hue
Ek do aise thay jo dil se khole hain

Yeh mera pehla ramzan tha us ky begair
Mat pocho kis moh se roze khole hain

Warna dhoop ki parbat kis se kattaa tha
Us nay chhatri khol ke raste khole hain
غزل
زخموں نے مجھ میں دروازے کھولے ہیں
میں نے وقت سے پہلے ٹانکے کھولے ہیں

باہر آنے کی بھی سکت نہیں ہم میں
تو نے کس موسم میں پنجرے کھولے ہیں

کون ہماری پیاس پہ ڈاکہ ڈال گیا
کس نے مشکیزوں کے تسمے کھولے ہیں

یوں تو مجھ کو کتنے خط موصول ہوئے
اک دو ایسے تھے جو دل سے کھولے ہیں

یہ میرا پہلا رمضان تھا اُس کے بغیر
مت پوچھو کس منہ سے روزے کھولے ہیں

ورنہ دھوپ کا پربت کس سے کٹتا تھا
اُس نے چھتری کھول کے رستے کھولے ہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں