Kia Bhed Hai Pani Main Batata Nahi Pani

Ghazal
Kia Bhed Hai Pani Main Batata Nahi Pani
Khul kar bhi ali samne ata nahi pani

Darwish amanat main khayanat nahi karte
Matti se koi baat chupata nahi pani

Tum ne kabhi chakhi ho to tumhain pata ho
Wo aag jese khud bhi bujhata nahi pani

Yeh sirf koi cheez nahi ilm hai pora
Afsos magar apko ata nahi pani

Yeh khel kahin tumhain le hi na duube
Piyason ko dekhata hai pilata nahi pani

Kia bhed hai pani main batata nahi pani
Khul kar bhi ali samne ata nahi pani
غزل
کیا بھید ہے پانی میں بتاتا نہیں پانی
کھل کر بھی علیؔ سامنے آتا نہیں پانی

درویش امانت میں خیانت نہیں کرتے
مٹی سے کوئی بات چھپاتا نہیں پانی

تم نے کبھی چکھی ہو تو تمہیں پتہ ہو
وہ آگ جسے خود بھی بجھاتا نہیں پانی

یہ صرف کوئی چیز نہیں علم ہے پورا
افسوس مگر آپکو آتا نہیں پانی

یہ کھیل کہیں تمہیں لے ہی نہ ڈوبے
پیاسوں کو دیکھتا ہے پلاتا نہیں پانی 

کیا بھید ہے پانی میں بتاتا نہیں پانی
کھل کر بھی علیؔ سامنے آتا نہیں پانی

اپنا تبصرہ بھیجیں