Yeh Saal Bhi Udaas Raha Rooth Kar Ggaya

Yeh Saal Bhi Udaas Raha Rooth Kar Ggaya

غزل
یہ سال بھی اداس رہا روٹھ کر گیا
تجھے سے ملے بغیر دسمبر گزر گیا

عمر رواں خزاں کی ہوا سے بھی تیز تھی
ہر لمحہ برگ زرد کی صورت بکھر گیا

کب سے گھرا ھوا ھوں بگولوں کے درمیاں
صحرا بھی میرے گھر کے در و بام پر گیا

دل میں چٹختے،چیختے وہموں کے بوجھ سے
وہ خوف تھا کہ رات میں سوتے میں ڈر گیا

جو بات معتبر تھی وہ سر سے گزر گئی
جو حرف سرسری تھا وہ دل میں اتر گیا

ہم عکس خون دل ھی لٹاتے رھے مگر
وہ شخص آنسوؤں کی دھنک میں نکھر گیا

کیا دشمنی تھی چاند کو گھر کے چراغ سے
گھر بجھ گیا تو چاند ندی میں اتر گیا

“محسن”یہ رنگ روپ یہ رونق بجا مگر
میں زندہ کیا رہوں کہ میرا جی تو بھر گیا
Ghazal
Yeh Saal Bhi Udaas Raha Rooth Kar Ggaya
Tujh se milay bagair december guzar gaya

Umre-e-rawaan khizaan ki hawa se bhi tez thi
Her lamha barg-e-zard ki surat bikhar gaya

Dil main cht’taktay cht’takty wehmon ke bojh se
Woh khauf tha keh raat ko sotay main dar gaya

Jo baat mo’tabar thi woh sar se guzar gaye
Jo harf sar sari thi woh dil main utar gaya

Hum aks-e-khoon-e-dil hi lutatay phiray magar
Woh shaks anso’on ki shanak main nikhar gaya

Mohsin yeh rang-o-roop yeh ronaq baja magar
Main zinda kiya rahon keh mera jee to bhar gaya

اپنا تبصرہ بھیجیں