Tum Nay Haal Pocha Hai Hallat Mohabbat Main

نظم: دوست کے نام خط
تم نے حال پوچھا ہے حالت محبت میں حال کا بتانا کیا
دل سیسک رہا ہو تو زخم کا چھپانا کیا

تم جو پوچھ بیٹھے ہو کچھ تواب بتانا ہے
بات اک بہانہ ہے

تم نے حال پوچھا ہے اک دیا جلاتا ہوں
ٹھیک ہے بتاتا ہوں

روز اُس کی یادوں میں دور تک چلے جانا
جو بھی تھا کہا اُس نے اپنے ساتھ دوهرانا

سانس جب رکے تو اپنی مرتی آنکھوں میں
اُس کی شکل لے آنا اور زندگی پانا روز ایسے ہوتا ہے

کچھ پرانے میسج ہیں جن میں اُس کی باتیں ہیں
کچھ طویل صبحیں ہیں کچھ قدیم راتیں ہیں

میں نے اُس کی باتوں میں زندگی گزاری ہے
زندگی مٹانے کا حوصلہ نہیں مجھ میں

ایک ایک لفظ اُس کی سانس میں پرویا ہے روح میں سمویا ہے
اُس کے جتنے میسج ہیں روز کھول لیتا ہوں

اُس سے کہہ نہیں پاتا خود سے بول لیتا ہوں
اُس کے پیج پر جا کر روز دیکھتا ہوں میں

آج کتنے لوگوں نے اُس کی پیروی کی ہے
اور سوچتا ہوں میں یہ نصیب والے ہیں

اُس کو دیکھ سکتے ہیں اُس سے بات کرتے ہیں
یہ اجازتوں والے مجھ سے کتنے بہتر ہیں

میں تو داغ تھا کوئی جو مٹا دیا اُس نے
اگر مٹا دیا اُس نے ٹھیک ہی کیا اُس نے

تم نے حال پوچھا تھا لو بتا دیا میں نے
جو بھی کچھ بتایا ہے , اُس کو مت بتا دینا

پڑھ کے رو پڑٓھو تو پھر ان تمام لفظوں کو بس گلے لگا لینا
وہ میری محبت ہے اور سدا رہے گی وہ

جب نہیں رہوں گا تو اک دن کہے گی وہ
تم ‘علؔی” فقت تم تھے جس نے مجھ کو چاہا تھا

اُس نے میرے ماتھے کو چوم کر بتایا تھا
تم دعا کا چہرا ہو تم حیا کا پہرہ ہو

میں تو تب نہیں ہوں گا پر میری سبھی نظمیں اُس کی بات سن لیں گی
تم بھی مسکرا دینا پھر بہت محبت سے اُس کو سب بتا دینا

اُس کے نرم ہاتھوں میں میرا خط تھاما دینا
لو یہ خط تمہارا ہے اور اُس کی جانب سے وہ جو بس تمہارا تھا آج بھی تمہارا ہے
Nazam :Dost Ky Naam Khat
Tum Nay Haal Pocha Hai Hallat Mohabbat Main Haal Batna Kiya
Dil sisak raha ho to zakham ka chupana kiya

Tum jo pooch baithy ho kuch to ab batna hai
Baat to ek bahaana hai

Tum nay haal pucha hai ek diya jalata hun
Theek hai batata hun

Rooz us ki yaadon main door tak chlay jana
Jo bhi tha kaha us ny apnay sath dhorana

Saans jab roky to apni marti aankho main
Us ki shakal lay ana aur zindagi pana roz asiay hota hai

Kuch poraney message hain jin main uski baatein hain
Kuch taweel subhain hain kuch qadeem raatein hain

Main nay us ki baaton main zindagi guzari hai
Zindagi mitanay ka hosla nahi mujh main

Aik aik lafz us ki saans main piroya hai roh main samoya hai
Us ky jitnay message hain roz khol laita hun

Us say keh nahi pata khud say bol laita hun
Us ky page per ja kar roz dekhta hun main

Aj kitnay logo nay us ki paravi ki hai
Aur sochta hun main yeh naseeb walay hain

Usko dekh sakty hain, us sy baat kartay hain
Yeh ijazato waly mujhsy kitny bhetar hain

Main tu dag tha koi jo meta diya us nay
Agar meta diya us nay theek hi kiya us nay

Tum nay haal pocha tha lo bata diya main nay
Jo bhi kuch batya hai , us ko mat bata dana

Phar ky ro pharo to phir , un tamam lafzo ko galay laga layna
Wo meri mohabbat hai aur sada rehay ge wo

Jab nahi raho ga to ek din kehay ge wo
Tum “ali’’ faqat tum thay jis nay mujh ko chaha tha

Us nay meray mathay ko choom kar bataya tha
Tum dua ka chehra ho tum haya ka phehra ho

Main to tab nahi hun ga per meri sabhi nazmein uski baat sun layion ge
Tum bhi muskara dena

Phir bahut mohabbat say usko sab bata dana
Usky naram hatho main mera khat thama

اپنا تبصرہ بھیجیں