Tere Firaaq Ke Lamhe Shumar Karte Hue

Ghazal
Tere Firaaq Ke Lamhe Shumar Karte Hue
Bakhaar gaye hain tera intazar karte hue

Tumhain khabar hi nahi keh koi tuut gaya
Muhabbaton ko bahut paaedaar karte hue

Main muskurata hua aaina main ubhron ga
Wo ro paray gai achanak singhaar karte hue

Wo keh rehi thi samandar nahi hain aankhen hain
Main un main doob gaya aitbar karte hue

Bhonvar jo mujh main paray hain wo main hi janta hun
Tumhare hijar ke darya ko paar karte hue
غزل
تیرے فراق کے لمحے شمار کرتے ہوۓ
بکھر گۓ ہیں تیرا انتظار کرتے ہوۓ

تمہیں خبر ہی نہیں کہ کوئی ٹوٹ گیا
محبتوں کو بہت پائدار کرتے ہوۓ

میں مسکراتا ہوا آئینہ میں ابھرو گا
وہ رو پڑے گی اچانک سنگھار کرتے ہوۓ

وہ کہہ رہی تھی سمندر نہیں ہیں آنکھیں ہیں
میں ان میں ڈوب گیا اعتبار کرتے ہوۓ

بھنور جو مجھ میں پڑے ہیں وہ میں ہی جانتا ہوں
تمہارے ہجر کے دریا کو پار کرتے ہوۓ

اپنا تبصرہ بھیجیں