Shahr-E-Be Mahar Se Paiman-E-Wafa

Shahr-E-Be Mahar Se Paiman-E-Wafa

Shahr-E-Be Mahar Se Paiman-E-Wafa Kia Bandhein
Khaak urti hai gul-e-tar ki hawa kia bandhein

Jante hain safar-e-shauq ki had kia hogi
Zor bandhein bhi tou ham aabla pa kia bandhein

Koi bole ga tou aawaz sunayi day gi
Hoo ka alam ho tu mazmoon sada kia bandhein

Sari basti hoi ek mauja safak ki nazar
Ab koi band sar-e-sel bala kia bandhein

Aakherish har nafs garm ka anjam hai aik
So ghari bhar ko tilisam man-o-maa kia bandhein

Shahr-e-be mahar se paiman-e-wafa kia bandhein
Khaak urti hai gul-e-tar ki hawa kia bandhein
غزل
شہر بے مہر سے پیمانِ وفا کیا باندھیں
خاک اُڑتی ہے گلِ تر کی ہوا کیا باندھیں

جانتے ہیں سفر شوق کی حد کیا ہوگی
زور باندھیں بھی تو ہم آبلہ پا کیا باندھیں

کوئی بولے گا تو آواز سنائی دے گی
ہو کا عالم ہو تو مضمون صدا کیا باندھیں

ساری بستی ہوئی اک موجہ سفاک کی نذر
اب کوئی بند سرِ سیل بلا کیا باندھیں

آخرِش ہر نفس گرم کا انجام ہے ایک
سو گھڑی بھر کو طلسم من وما کیا باندھیں

شہر بے مہر سے پیمانِ وفا کیا باندھیں
خاک اُڑتی ہے گلِ تر کی ہوا کیا باندھیں

اپنا تبصرہ بھیجیں