Hijar Mein Khud Ko Tasalli| Ghazal Shayari

Hijar Mein Khud Ko Tasalli| Ghazal Shayari

Hijar Mein Khud Ko Tasalli Di Kaha Kuch Bhi Nahi
Dil magar hansne laga aaya bara kuch bhi nahi

Hum agar sabar mein rehte hain tou kya kuch bhi nahi
Jane walon kabhi dekho bacha kuch bhi nahi

Be dili youn hai keh rab koi maseeha bheje
Hum maseeha se bhi keh dengay ao ja kuch bhi nahi

Dekh bin ishq howa dekh bina door ho howay
Itna kuch ho bhi geya aur howa kuch bhi nahi

Suste abid nah banen lat ko ibadat nah kahin
Aashiqui lazat-o-zilat ke siwa kuch bhi nahi

Mein tere baad musalle peh bohat rota raha
Aur kahe yar khuda khair bhala kuch bhi nahi

Ishq mardana tabiyat nahi rakhta afkar
Warna dil ke liye yeh husan-o-aada kuch bhi nahi

Hijar mein khud ko tasalli di kaha kuch bhi nahi
Dil magar hansne laga aaya bara kuch bhi nahi
غزل
ہجر میں خود کو تسلی دی کہا کچھ بھی نہیں
دل مگر ہنسنے لگا آیا بڑا کچھ بھی نہیں

ہم اگر صبر میں رہتے ہیں تو کیا کچھ بھی نہیں
جانے والوں کبھی دیکھو بچا کچھ بھی نہیں

بے دلی یوں ہے کہ رب کوئی مسیحا بھیجے
ہم مسیحا سے بھی کہہ دیں گے اوجا کچھ بھی نہیں

دیکھ بن عشق ہوا دیکھے بنا دور ہوئے
اتنا کچھ ہو بھی گیا اور ہوا کچھ بھی نہیں

سستے عابد نہ بنیں لت کو عبادت نہ کہیں
عاشقی لذت و ذلت کے سوا کچھ بھی نہیں

میں ترے بعد مصلے پہ بہت روتا رہا
اور کہا یار خدا خیر بھلا کچھ بھی نہیں

عشق مردانہ طبیعت نہیں رکھتا افکار
ورنہ دل کیلیے یہ حسن و ادا کچھ بھی نہیں

ہجر میں خود کو تسلی دی کہا کچھ بھی نہیں
دل مگر ہنسنے لگا آیا بڑا کچھ بھی نہیں

اپنا تبصرہ بھیجیں