Samaye Hain Meri Ankhon Mein Khawab Jaise Din

Samaye Hain Meri Ankhon Mein Khawab Jaise Din

Samaye Hain Meri Ankhon Mein Khawab Jaise Din
Wo mahatab si raatein gulaab jaise din

Wo kanj-e-sheher wafa mein sahaab jaise din
Wo din keh jin ka tassawoor mataa-e-qarya-e-dil

Wo din keh jin ki tajjali faroog har mehfil
Gaye wo din tou andheron mein khoo gai manzil

Fizza ka jabar shakastah paron pe aa puncha
Azaab darbardi be gharon pe aa puncha

Zara se dair mein suraaj saroon pe aa puncha
Kise dekhaye yeh be maigi khazenon ki

Kati jo fasal tu ghurbat barhi zameenon ki
Yahi saza hai zamane mein be yaqeenon ki

Samaye hain meri ankhon mein khawab jaise din
Wo mahatab si raatein gulaab jaise din
نظم
سمائے ہیں مری آنکھوں میں خواب جیسے دن
وہ ماہتاب سی راتیں گلاب جیسے دن

وہ کنج شہر وفا میں سحاب جیسے دن
وہ دن کہ جن کا تصور متاع قریہ دل

وہ دن کہ جن کی تجلی فروغِ ہر محفل
گئے وہ دن تو اندھیروں میں کھوگئی منزل

فضا کا جبر شکستہ پروں پہ آ پہنچا
عذاب دربدری بے گھروں پہ آ پہنچا

ذرا سی دیر میں سورج سروں پہ آ پہنچا
کسے دکھائے یہ بے مائیگی خزینوں کی

کٹی جو فصل تو غربت بڑھی زمینوں کی
یہی سزا ہے زمانے میں بے یقینوں کی

سمائے ہیں مری آنکھوں میں خواب جیسے دن
وہ ماہتاب سی راتیں گلاب جیسے دن

اپنا تبصرہ بھیجیں