Mukhtalif Dastaan Sunata Hai| Zia Mazkoor Poetry

Mukhtalif Dastaan Sunata Hai| Zia Mazkoor Poetry

Mukhtalif Dastaan Sunata Hai
Mein ne jis se bhi tera pocha hai

Qais mujhe se juwe mein hara tha
Sach bataon tou dasht mera hai

Waise bhi ishq ke dafatir mein
Tere bhai ka naam chalta hai

Tum ne minto peh film dekhi hai
Mein ne minto ko parh ke samjha hai

Hum ko adat hai dheeme lehje ki
Aur buzurgon ko uncha sunta hai

Mein tou mil ke hi jawunga iss se
Tou bata tera kya irada hai

Baqi logon ko rok lo lekin
Ik usay jane do woh apna hai

Mukhtalif dastaan sunata hai
Mein ne jis se bhi tera pocha hai
غزل
مختلف داستاں سناتا ہے
میں نے جس سے بھی تیرا پوچھا ہے

قیس مجھ سے جوے میں ہارا تھا
سچ بتاؤں تو دشت میرا ہے

ویسے بھی عشق کے دفاتر میں
تیرے بھائی کا نام چلتا ہے

تم نے منٹو پہ فلم دیکھی ہے
میں نے منٹو کو پڑھ کے سمجھا ہے

ہم کو عادت ہے دھیمے لہجے کی
اور بزرگوں کو اونچا سنتا ہے

میں تومل کے ہی جاؤں گا اس سے
تو بتا تیرا کیا ارادہ ہے

باقی لوگوں کو روک لو لیکن
اک اسے جانے دو وہ اپنا ہے

مختلف داستاں سناتا ہے
میں نے جس سے بھی تیرا پوچھا ہے

اپنا تبصرہ بھیجیں