Mohabbat ki ek nazm

محبت کی ایک نظم:
اگر کبھی میری یاد آئے
تو چاند راتوں کی نرم دلگیر روشنی میں
کسی ستارے کو دیکھ لینا
اگر وہ نخل فلک سے اڑ کر
تمہارے قدموں میں آ گرے
تو یہ جان لینا وہ استعارہ تھا میرے دل کا
اگر نہ آئے
مگر یہ ممکن ہی کس طرح ہے
کہ تم کسی پر نگاہ ڈالو
تو اس کی دیوار جاں نہ ٹوٹے
وہ اپنی ہستی نہ بھول جائے
اگر کبھی میری یاد آئے
گریز کرتی ہوا کی لہروں پہ ہاتھ رکھنا
میں خوشبوؤں میں تمہیں ملوں گا
مجھے گلابوں کی پتیوں میں تلاش کرنا
میں اوس قطروں کے آئینوں میں تمہیں ملوں گا
اگر ستاروں میں اوس قطروں میں خوشبوؤں میں نہ پاؤ مجھ کو
تو اپنے قدموں میں دیکھ لینا میں گرد ہوتی مسافتوں میں تمہیں ملوں گا
کہیں پہ روشن چراغ دیکھو
تو جان لینا کہ ہر پتنگے کے ساتھ میں بھی بکھر چکا ہوں
تم اپنی ہاتھوں سے ان پتنگوں کی خاک دریا میں ڈال دینا
میں خاک بن کر سمندروں میں سفر کروں گا
کسی نہ دیکھے ہوئے جزیرے پہ
رک کے تم کو صدائیں دوں گا
سمندروں کے سفر پہ نکلو
تو اس جزیرے پہ بھی اترنا
:mohabbat ki ek nazm

agar kabhi meri yaad aae
to chand raaton ki narm dil-gir raushni mein
kisi sitare ko dekh lena

agar wo nakhl-e-falak se ud kar
tumhaare qadmon mein aa gire
to ye jaan lena wo istiara tha mere dil ka

agar na aae

magar ye mumkin hi kis tarah hai
ki tum kisi par nigah dalo

to us ki diwar-e-jaan na tute
wo apni hasti na bhul jae

agar kabhi meri yaad aae

gurez karti hawa ki lahron pe hath rakhna
main khushbuon mein tumhein milunga

mujhe gulabon ki pattiyon mein talash karna
main os-qatron ke aainon mein tumhein milunga

agar sitaron mein os-qatron mein khushbuon mein na pao mujh ko
to apne qadmon mein dekh lena main gard hoti masafaton mein tumhein milunga

kahin pe raushan charagh dekho

to jaan lena ki har patange ke sath main bhi bikhar chuka hun
tum apni hathon se un patangon ki khak dariya mein dal dena

main khak ban kar samundaron mein safar karunga
kisi na dekhe hue jazire pe

ruk ke tum ko sadaen dunga

samundaron ke safar pe niklo
to us jazire pe bhi utarna

اپنا تبصرہ بھیجیں