Mile Kisi Se Gire Jis Bhi Jaal Per Mere Dost

Mile Kisi Se Gire Jis Bhi Jaal Per Mere Dost

Ghazal
Mile Kisi Se Gire Jis Bhi Jaal Per Mere Dost
Mein us ko chor chuka us ke haal per mere dost

Tumhain bhi door se yeh phool lag rahe hain na
Lahoo ke dagh hain yeh meri shaal per mere dost

Zameen pe sab ka muaqdar tou mere jisa nahi
Kisi ke sath tou hoga wo call per mere dost

Jagah badlte howay dair tou nahi lagti
Doubara tanz na karna nidhaal per mere dost

Nahi ke tere hi danton mein es ke misray hain
Bahut palle hain kalam-e-jamal per mere dost

Mile kisi se gire jis bhi jaal per mere dost
Mein us ko chor chuka us ke haal per mere dost
غزل
ملے کسی سے گرے جس بھی جال پر میرے دوست
میں اُس کو چھوڑ چکا اُس کے حال پر میرے دوست

تمہیں بھی دور سے یہ پھول لگ رہے ہیں نہ
لہو کے داغ ہیں یہ میری شال پر میرے دوست

زمیں پہ سب کا مقدر تو میرے جیسا نہیں
کسی کے ساتھ تو ہوگا وہ کال پر میرے دوست

جگہ بدلتے ہوئے دیر تو نہیں لگتی
دوبارہ طنز نہ کرنا نڈھال پر میرے دوست

نہیں کے تیرے ہی دانتوں میں اُس کے مصرے ہیں
بہت پلے ہیں کلام جمال پر میرے دوست

ملے کسی سے گرے جس بھی جال پر میرے دوست
میں اُس کو چھوڑ چکا اُس کے حال پر میرے دوست

اپنا تبصرہ بھیجیں