Mushkil Bari Thi Dasht-Ee-Mohabbat Ki Sair Bhi

Mushkil Bari Thi Dasht-Ee-Mohabbat Ki Sair Bhi

Mushkil Bari Thi Dasht-Ee-Mohabbat Ki Sair Bhi
Ukhray thay iss safar mein kai bar pair bhi

Tujh se kisi bhi rabt ki khwahish nahi rahi
Jab dostana khatam tu phir khatam bair bhi

Har bar aik rukh naya aata hai samne
Ho jitna aashna laga, itna hi ghair bhi

Acha hai uss ne dukh se kinara kaye rakha
Achay se kati umar hamare baghair bhi

Meri kisi bhi shab ko nahi kar saka bakhair
Muddat ke baad bheja gaya shab bakhair bhi

Donon hi aik dosray ki zid hain aur tum
Ek sath mangatay ho mohabbat bhi khair bhi

Mushkil bari thi dasht-e-mohabbat ki sair bhi
Ukhray thay iss safar mein kai bar pair bhi
غزل
مشکل بڑی تھی دشتِ محبت کی ، سیر بھی
اُکھڑے تھے اِس سفر میں کئی بار پیر بھی

تجھ سے کسی بھی ربط کی خواہش نہیں رہی
جب دوستانہ ختم تو پھر ختم بیر بھی

ہر بار ایک رخ نیا آتا ہے سامنے
ہو جتنا آشنا لگا، اِتنا ہی غیر بھی

اچھا ہے اُس نے دکھ سے کنارہ کئے رکھا
اچھے سے کاٹی عمر ہمارے بغیر بھی

میری کسی بھی شب کو نہیں کر سکا بخیر
مدت کے بعد بھیجا گیا شب بخیر بھی

دونوں ہی ایک دوسرے کی ضد ہیں اور تم
اک ساتھ مانگتے ہو، محبت بھی خیر بھی

مشکل بڑی تھی دشتِ محبت کی ، سیر بھی
اُکھڑے تھے اِس سفر میں کئی بار پیر بھی
Poet: Komal Joya

اپنا تبصرہ بھیجیں