Meray Jisa Koi Bonyad Main Kaam Ata Hai

غزل
میرے جیسا کوئی بنیاد میں کام آتا ہے
گھر کی تختی پہ کسی اور کا نام آتا ہے

تم سے کہتا ہوں محتاط ہی رہنا اُس سے
ایک لڑکا ہے جسے میرا کلام آتا ہے

مسئلہ کوئی بھی ہو نام تیرا لیتا ہوں
کیا کرو میں مجھے ایک ہی نام آتا ہے

آدمی، خور، شجر گھورنے لگتے ہیں مجھے
بھاگ پڑتا ہوں جہاں وقت قیام آتا ہے

میری جانب کوئی گردش نہیں لاتی اُس کو
اب میرے شور مچانے پہ ہی جام آتا ہے
Ghazal
Meray Jisa Koi Bonyad Main Kaam Ata Hai
Ghar ki takhti pay kisi aur ka naam ata hai

Tum say kehta hun mohtat hi rehna us say
Aik larka hai jis ko mera kalam ata hai

Masla koi bhi ho naam tera lata hun
Kiya karo main mujhy aik hi naam ata hai

Admi , khor , shajar ghorany lagtay hain mujhy
Bhaag parta hun jahaan waqat qayam ata hai

Meri janib koi gardish nahi lati usko
Ab meray shoor machany py hi jaam ata hai

اپنا تبصرہ بھیجیں